28

امریکا میں پولیس کے ہاتھوں دم گھٹنے سے ایک اورشہری ہلاک

ایک ایسا ہی واقعہ گزشتہ برس بھی پیش آیا تھا جہاں افریقی نژاد امریکی سیاہ فام شہری جارج فلائیڈ کی ہلاکت بھی پولیس کی طاقت کے بے جا استعمال سے ہوئی تھی۔

ایک ایسا ہی واقعہ گزشتہ برس بھی پیش آیا تھا جہاں افریقی نژاد امریکی سیاہ فام شہری جارج فلائیڈ کی ہلاکت بھی پولیس کی طاقت کے بے جا استعمال سے ہوئی تھی۔

کیلی فورنیا: ریاست کیلی فورنیا میں پولیس افسروں نے ایک اورشہری کوموت کی نیند سلادیا۔

امریکی ریاست کیلی فورنیا میں پولیس افسران کے ہاتھوں دم گھٹنے سے ایک اور26 سالہ ماریوگونزیلزشہری ہلاک ہوگیا۔ پولیس کی جانب سے نوجوان کو گرفتاری کے وقت 5 منٹ تک زمین پرزبردستی دبائے رکھا گیا جس کے باعث دم گھٹنے سے اس کی موت واقع ہوگئی۔

رپورٹس کے مطابق 26 سالہ شہری کی موت سے متعلق تمام تفصیلات دوکیمروں کی ویڈیو فوٹیج کی مدد سے ملیں۔ نوجوان کی موت کا واقعہ 19 اپریل کوایک پارک میں پیش آیا تھا۔ واقعہ سے متعلق پولیس کو ایک کال موصول ہوئی کہ پارک میں ایک مشتبہ شخص نشے کی حالت میں موجود ہے۔ پولیس فوری طورپرپارک پہنچی تو نوجوان کو اپنی شناخت بتانے میں دشواری ہوئی۔ جس پر پولیس نے اس کے ہاتھ کمرکے پیچھے باندھنے کی کوشش کی لیکن جب اس نے مزاحمت کی تو پولیس نے اس کو زمین پر گرادیا اورپولیس نے اپنی کہنی سے اس کی گردن کودبانا شروع کردیا۔

ویڈیومیں دیکھا جاسکتا ہے کہ نوجوان خود کوچھڑوانے کی کوشش کررہا تھا، اس کے بعد ایک افسرنے اپنے گھٹنے سے اس کی گردن پرجب کہ دوسرے نے کہنی کندھے پررکھی۔

اس خبرکوبھی پڑھیں: جارج فلائیڈ کی ہلاکت؛ امریکی پولیس آفیسرقتل کا مجرم قرار

وڈیوکے مطابق گونزیلزسانس لینے کی کوشش کررہا ہے اورساتھ ساتھ کہہ رہا ہے کہ اس نے کچھ بھی نہیں کیا ہے۔ جس کے بعد اس کی حالت مزید غیرہوگئی جس کے بعد پولیس کی جانب سے گونزیلزکوہلا جلا کرمصنوعی طریقے سے سانس دینے کی کوشش بھی کی گئی۔

واضح رہے کہ ایک ایسا ہی واقعہ گزشتہ برس بھی پیش آیا تھا جہاں افریقی نژاد امریکی سیاہ فام شہری جارج فلائیڈ کی ہلاکت بھی پولیس کی طاقت کے بے جا استعمال سے ہوئی تھی۔ تاہم رواں ماہ ہی واقعے میں ملوث امریکی پولیس آفیسرکوقتل کا مجرم قراردیتے ہوئے گرفتارکرلیا گیا تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں