16

زلزلے میں بند ہوجانے والا 100 سال پرانا وال کلاک دوسرے زلزلے سے چلنے لگا

تصویر میں نظرآنے والا گھڑیال زلزلے کے دس برس بعد دوبارہ چلنے لگا ہے۔ فوٹو: ڈیلی مِرر

تصویر میں نظرآنے والا گھڑیال زلزلے کے دس برس بعد دوبارہ چلنے لگا ہے۔ فوٹو: ڈیلی مِرر

ٹوکیو: جاپان سے ایک دلچسپ خبرآئی ہے کہ دس سال قبل ہولناک زلزلے اور سونامی سے خراب ہوکر بند ہونے والا سوسالہ قدیم وال کلاک دوبارہ چلنے لگا ہے۔

یہ کلاک بدھ مت سے وابستہ فیومونجی مندر میں نصب تھا جو صوبے میاگی کے شہر یاماموٹو میں واقع ہے۔ 2011 میں جاپانی سونامی سے یہ کلاک رک گیا تھا کہ اور اب دس برس بعد دوبارہ چلنے لگا ہے۔ اس سال تیرہ فروری کو اس علاقے میں ریکٹر اسکیل پر چھ شدت کا زلزلہ رونما ہوا تھا۔ جس کے بعد خیال کیا جارہا ہے کہ یہ کلاک دوبارہ چلنے لگا ہے۔

اگرچہ لاک ڈاؤن کی باعث کئی ماہ سے اسے نہیں دیکھا گیا لیکن مندر میں موجود ایک ملازم بنزان ساکانو نے بتایا کہ سونامی کے فوراً بعد وہ یہاں پہنچا تھا۔ اس نے کہا کہ گھڑی کو صاف کرکے دوبارہ چلانے کی بہت کوشش کی گئی جو کامیاب نہ ہوسکی تھی۔

اس طرح کئی برس تک گھڑی کی سوئی ٹس سے مس نہیں ہوئی ۔ کچھ روز قبل جب ساکانو دوبارہ وہاں پہنچے تو کلاک چل رہا تھا اور اب تک کام کررہا ہے۔ شاید اس کی وجہ دوسرا زلزلہ ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں